رسائی

ٹیکسٹ سائیز

رنگوں کے اختایارات

مونوکروم مدھم رنگ گہرا

پڑھنے کے ٹولز

علیحدگی پیمائش
GIJC21, Icarus Flights, aircraft tracking
GIJC21, Icarus Flights, aircraft tracking

Icarus Flights, the new aircraft tracking tool from C4ADS, helps reporters investigate illicit flight activity around the world. Image: Shutterstock

رپورٹنگ

موضوعات

اکارس فلائٹس: ہوائی جہازوں کو ٹریک کرنے کا نیا ٹول

یہ مضمون ان زبانوں میں بھی دستیاب ہے

ہوائی جہازوں کو ٹریک کرنا

Icarus Flights, the new aircraft tracking tool from C4ADS, helps reporters investigate illicit flight activity around the world. Image: Shutterstock

تفتیشی صحافیوں نے ولادیمیر پیوٹن سے جڑے مشتبہ تاجروں کے مفادات کو سمجھنے کے لیے ہوائی جہازوں کو ٹریک کرنے کے آلات کا استعمال کیا ہے، فرانس میں تارکین وطن کو ملک بدر کرنے کے لیے نجی جیٹ طیاروں کے استعمال کا انکشاف کیا ہے، اور ایمیزون کے جنگلات میں غیر قانونی کان کنی سے سونا لے جانے والی پروازوں کو بے نقاب کیا ہے۔

اب، غیر منافع بخش سینٹر فار ایڈوانسڈ ڈیفنس اسٹڈیز (C4ADS) کا ایک نیا ہوائی جہاز اور فلائٹ ٹریکنگ ٹول، جسے اکارس فلائٹس اکارس فالئٹس  کہا جاتا ہے، نامہ نگاروں کو آسمانوں میں غیر قانونی سرگرمیوں کو بے نقاب کرنے کے لیے ایک زبردست اعلیٰ معیار کا ٹول فراہم کرتا ہے۔ 12 ویں عالمی تحقیقاتی صحافتی کانفرنس (#GIJC21) میں ایک پینل کے دوران، C4ADS سافٹ ویئر ڈویلپر جیک گلاس، اور ان کی ساتھی، تنازعات کے مالیاتی تجزیہ کار، ایوا کاہن نے فلائٹ ٹریکنگ اور اکارس کی جامع صلاحیتوں کے حوالے ایک ٹٹوریل دیا۔

ہوائی جہاز کی شناخت

گلاس نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ڈیٹا کے تفتیش کاروں کے لیے ہوائی جہاز کا سراغ لگانا شروع کرنے کا سب سے آسان مقام اس کی ٹیل یا رجسٹریشن نمبر کی شناخت کرنا ہے۔ یہ نمبر عام طور پر ہوائی جہاز کی دم اور/یا جسم پر پینٹ کیا جاتا ہے۔ اکثر، ٹیل کا نمبر ہوائی جہاز کی اصلیت یا سرگرمیوں کا پہلا اشارہ ہوتا ہے اور سوشل میڈیا سے لی گئی اوپن سورس تصاویر پر ڈھونڈا جا سکتا ہے۔

اس عمل کے اگلے مراحل میں ہوائی جہاز کے بارے میں زیادہ سے زیادہ شناختی ڈیٹا اکٹھا کرنا شامل ہے۔ ٹیل نمبر کی گوگل سرچ سے ہوائی جہاز کا رجسٹریشن نمبر اور ہوائی جہاز کی قسم معلوم ہو سکتی ہے۔ یہی تلاش ہوائی جہاز کا منفرد سیریل یا MSN (مینوفیکچرر کا سیریل نمبر) بھی دکھا سکتی ہے، جو بدلے میں، ایک رپورٹر کو مستند پروازیں یا سفر تلاش کرنے کے لیے پرجوش اور اسپاٹنگ سائٹس، جیسے RussianPlanes.net، استعمال کرنے کے قابل بنا سکتی ہے۔

گلاس نے ہوائی جہاز کے مختلف شناخت کنندگان کو بتایا، جن میں سے کچھ عارضی ہیں اور پتہ لگانے کو مزید مشکل بنانے کے لیے آسانی سے تبدیل کیا جا سکتا ہے:

شاخت کنندہ تفصيلات مثال
موڈ-ایس ہیکس کوڈ، ٹرانسپونڈر کوڈ، یا ICAO کوڈ چھ ہندسوں کا حروف نمبری کوڈ جو ایک منفرد ہوائی جہاز کے ٹرانسپونڈر کو نامزد کرتا ہے۔ یہ عام طور پر قومی حکومتوں کے ذریعہ ایک مخصوص رجسٹریشن نمبر سے منسلک ہوتا ہے۔ تاہم، اگر کسی طیارے کو کسی دوسرے ملک میں دوبارہ رجسٹر کیا جاتا ہے تو یہ کوڈ تبدیل ہو جائے گا۔ AC1DD یا ac1dd
سیریل نمبر یا MSN یہ ہوائی جہاز بنانے والے کی طرف سے مختص کیے جاتے ہیں، اکثر جسم پر ایک پلیٹ میں مہر لگا دی جاتی ہے، اور عام طور پر ہوائی جہاز کی زندگی بھر میں تبدیل نہیں ہوتی ہے۔ 53465956
رجسٹریشن نمبر حروف عددی اسٹرنگ جس میں شامل ہیں: رجسٹریشن کے ملک کی نشاندہی کرنے والا ایک سابقہ ​​اور ایک مخصوص ہوائی جہاز کی نشاندہی کرنے والا لاحقہ۔ تاہم، یہ نمبر مستقل نہیں ہیں، اور اگر مالک جہاز کو کسی دوسرے ملک میں دوبارہ رجسٹر کرتا ہے تو آسانی سے تبدیل کیا جا سکتا ہے۔ N12345          (N = US);    EI-DCK (EI = آئرلینڈ)
کال ساين پرواز کے دوران ہوائی جہاز کے ذریعے نشر ہونے والے حروف نمبری شناخت کار، جو آپریٹر اور پرواز نمبر کی نشاندہی کر سکتے ہیں۔ تجارتی طیاروں کے لیے، وہ اکثر ائیر لائن کی نشاندہی کرتے ہیں جو ہوائی جہاز کی مالک ہے یا اسے چلاتی ہے۔ UAL22 (یونائٹڈ ایئرلائنز, فلائٹ 22) یا RYR96AT

ہوائی جہاز کی ملکیت

ہوائی جہاز کے مجموعی شناخت کنندگان اور متعدد ڈیٹا بیسز کا استعمال کرتے ہوئے، ایک رپورٹر اس مالک کی شناخت کر سکتا ہے جس کے تحت ہوائی جہاز رجسٹرڈ ہے۔ شکاگو کنونشن کے مطابق تمام طیاروں کا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ لیکن انہیں مالک کے رہائشی ملک میں ایسا کرنے کی ضرورت نہیں ہے، اور ہوائی جہاز کے مالکان کے پاس اپنی حقیقی شناخت چھپانے کے متعدد طریقے ہیں۔

ٹیکس کی ذمہ داری اور رازداری سے متعلق خدشات کا نتیجہ اکثر یہ نکلتا ہے کہ مالکان اپنے ہوائی جہاز کو نام نہاد رازداری کے دائرہ اختیار جیسے اروبا یا آئل آف مین میں رجسٹر کراتے ہیں جن میں شفافیت کے اصول بہت کم ہیں یا نہیں۔ رجسٹرڈ مالک وہ شخص یا ادارہ بھی نہیں ہو سکتا جو درحقیقت ہوائی جہاز استعمال کرتا ہے (جسے "فائدہ مند مالک” کہا جاتا ہے) بلکہ شیل کمپنی، ٹرسٹ، یا فرنٹ مین۔ جیک گلاس نے کہا، "اگر میں اپنی شناخت چھپانے کی کوشش کر رہا تھا، تو میں یقینی طور پر نجی رجسٹری کے ساتھ جانے کے لیے اضافی رقم ادا کرنے پر غور کروں گا” جیسا کہ اروبا میں ہے۔

نجی رجسٹریاں عام طور پر مفت، قومی ہوا بازی کے ڈیٹا بیس کے مقابلے میں معلومات کا ایک بہتر ذریعہ ہوتی ہیں، لیکن کچھ کے لیے فیس کی ضرورت ہوتی ہے جو بہت سے آزاد صحافیوں کی پہنچ سے باہر ہوتی ہے۔ ان میں ایرو ٹرانسپورٹ ڈیٹا بینک (AeroTransport Data Bank)، جس میں زیادہ تر رجسٹروں سے ایک متحد تلاش کا نظام شامل ہے، اورسی ایچ ایوایشن (CH Aviation)، ہوائی جہاز کے سب سے بڑے انٹیلی جنس فراہم کنندگان میں سے ایک ہے، لیکن ان اخراجات تک رسائی تقریباً $1,000-$2,000 امریکی ڈالر سالانہ ہے۔

درج ذیل ڈیٹا بیس عالمی رہنماؤں کے زیر استعمال فوجی طیاروں یا نجی طیاروں کی شناخت کے لیے مددگار ثابت ہو سکتے ہیں۔

سکرامبل میلیٹری ائیرکرافٹ ڈیٹا (Scramble Military Aircraft Database) بیس کی دیکھ بھال ایک ڈچ شوقین کے ذریعہ کی جاتی ہے، اور شاید یہ سب سے بڑا اوپن سورس ڈیٹاسیٹ ہے۔

پرائیویٹ جیٹس آف ورلڈ لیڈرز(Private Jets of World Leaders) کے پاس "سویلین” طیاروں کی پروفائلز ہیں جو عالمی رہنما چارٹرڈ اور استعمال کرتے ہیں۔

ہوائی جہازوں کو ٹریک کرنا

گلاس نے وضاحت کی کہ، زمینی ریڈار کے ذریعے ٹریکنگ کے بجائے، اب زیادہ تر جدید طیاروں کی شناخت ٹرانسپونڈرز کے ذریعے کی جاتی ہے جو جی پی ایس (GPS) یا سیٹلائٹ پر مبنی نیٹ ورکس کا حصہ ہیں۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ کئی ممالک اور خطے، جیسے کہ ریاست ہائے متحدہ، بھارت، جنوبی افریقہ، انڈونیشیا، اور پورے یورپ کا یہ حکم ہے کہ طیاروں کے پاس سیٹلائٹ نیویگیشن یا دیگر سنسرز کے ذریعے ہوائی جہاز کی پوزیشن کو ٹھیک کرنے کے لیے آٹومیٹک ڈیپنڈنٹ سرویلنس براڈکاسٹ (ADS-B) ٹیکنالوجی موجود ہو۔

اپنے علاقے میں آنے والی اور جانے والی پروازوں کا ڈیٹا اکٹھا کرنے کے خواہاں صحافیوں

ہوائی جہازوں کو ٹریک کرنا

Modern flight tracking system rely on satellite navigation and ADS-B ground receivers. Image: Screenshot

کے لیے ایک اہم ٹپ: کوئی بھی ADS-B گراؤنڈ ریسیور تعینات کر سکتا ہے جو سیٹلائٹ اور ہوائی جہاز کے ٹرانسپونڈر ٹرانسمیشن کو مثلث بنائے گا۔ یہ ریسیورز کافی آسان ہیں، صرف 10 سے 20 منٹ کے سیٹ اپ کی ضرورت ہوتی ہے، اور ایک بار آن ہونے سے علاقے میں ADS-B کی کوریج وسیع ہو جائے گی۔ C4ADS ان لوگوں کو مفت میں ADS-B آلات بھی فراہم کرے گا جو رضاکارانہ طور پر گراؤنڈ ریسیور اسٹیشن قائم کرنے اور اس سے اکارس فلائیٹس ٹول کی کوریج کو وسیع کریں۔

اکارس فلائٹز کو متعارف کروانا

"ایک بار جب آپ ان طیاروں کی شناخت کی معلومات تلاش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں جن میں آپ کی دلچسپی ہے، تو آپ شاید یہ جاننا چاہیں گے کہ وہ طیارے کہاں جا رہے ہیں۔” C4ADS کے تجزیہ کار کاہن نے کہا۔ "یہ وہ جگہ ہے جہاں اکارس آپ کو مدد فرام کر سکتا ہے۔“

ہوائی جہازوں کو ٹریک کرنا

Image: Screenshot, Icarus Flights

اکارس فلائیٹ ٹریکنگ سافٹ وئیر ایک ٹول ہے جو خاص طور پر تفتیش کاروں اور صحافیوں کے لیے موجودہ تجارتی ڈیٹا بیس کے استعمال کے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ یہ ان میں سے کچھ ڈیٹا بیس سے نکالتا ہے لیکن دیگر تجزیاتی خصوصیات کے ساتھ ساتھ لائیو عالمی ٹریکنگ، غیر فلٹر شدہ نتائج، اور تاریخی تلاش کی سرگرمیاں بھی فراہم کرتا ہے۔ اکارس کی مرئیت کا انحصار اس بات پر ہے کہ ADS ریسیورز کی طرف سے کتنی کوریج دی جاتی ہے، اس لیے علاقے میں میزبان ریسیورز رکھنے سے مقامی ٹریکنگ بہت بہتر ہو جاتی ہے۔

غیر فلٹر شدہ نتائج کی خصوصیت تفتیش کاروں کے لیے خاص طور پر مفید ہے کیونکہ تجارتی ڈیٹا بیس مالک کی درخواست پر ہوائی جہاز کی شناخت کرنے والے ڈیٹا کو ہٹا دیں گے، جس کا اکثر یہ مطلب ہوتا ہے کہ جن طیاروں یا پروازوں میں تفتیش کار کو سب سے زیادہ دلچسپی ہو گی وہ فلٹر کر کے چھپے ہوئے ہیں۔ اکارس فلائیٹس کو اس مسئلے سے بچنے اور دنیا بھر میں ہوائی جہاز پر شفافیت کو بہتر بنانے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

اکارس محل وقوع پر مبنی سرچ بھی فراہم کرتا ہے، ان تفتیش کاروں کے لیے جو مطالعہ کرنا چاہتے ہیں یا دستاویز کرنا چاہتے ہیں کہ کسی مخصوص علاقے میں کون سے طیاروں نے پرواز کی ہے۔ جب اس کے تاریخی تلاش کے فنکشن کے ساتھ ملایا جائے، اکارس کسی جغرافیائی علاقے میں یا ایک مخصوص مدت کے دوران غیر قانونی سرگرمیوں کی نگرانی کرنے کی کوشش کرنے والے تفتیش کاروں کے لیے ایک طاقتور ٹول فراہم کر سکتا ہے۔

ایک بات نوٹ کریں: اکارس فلائیٹس مکمل طور پر اوپن سورس ٹول نہیں ہے، اس لیے اسے استعمال کرنے میں دلچسپی رکھنے والے تفتیش کاروں کو اس کی مفت سروس تک رسائی کے لیے سائن اپ کرنے کے لیے C4ADS سے رابطہ کرنا چاہیے۔

ہمارے مضامین کو تخلیقی العام لائسنس کے تحت مفت، آن لائن یا پرنٹ میں دوبارہ شائع کریں۔

اس آرٹیکل کو دوبارہ شائع کریں


Material from GIJN’s website is generally available for republication under a Creative Commons Attribution-NonCommercial 4.0 International license. Images usually are published under a different license, so we advise you to use alternatives or contact us regarding permission. Here are our full terms for republication. You must credit the author, link to the original story, and name GIJN as the first publisher. For any queries or to send us a courtesy republication note, write to hello@gijn.org.

اگلی کہانی پڑھیں

Rijksmuseum archive comparison Freibrug cathedral

رپورٹنگ تجاویز اور ٹولز طریقہ کار

پرانی تصاویر کی تحقیق کرنے کے لیے نئی ٹیکنالوجی اور آن لائن وسائل

پرانی تصویروں کی تحقیق کے لیے نئی ٹیکنالوجی اور آن لائن وسائل استعمال کرنے کے لیے تجاویز اور ٹولز۔ یہ جانیں کے یہ تصاویر کہاں کی ہیں، کب لی گئیں اور کس نی لیں؟