رسائی

ٹیکسٹ سائیز

رنگوں کے اختایارات

مونوکروم مدھم رنگ گہرا

پڑھنے کے ٹولز

علیحدگی پیمائش

Image: Shutterstock

وسائل

» گائیڈ

وسائل

موضوعات

قدرتی آفت کے بعد پوچھے جانے والے 10 تفتیشی سوالات

یہ مضمون ان زبانوں میں بھی دستیاب ہے

investigate natural disaster earthquake Turkey

تحقیقاتی رپورٹرز کو یہ دیکھنا چاہیے کہ کون سے سیاسی فیصلوں اور پالیسیوں نے ترکی میں حالیہ زلزلوں کی طرح کی قدرتی آفات کو مزید خراب کرنے میں مدد کی۔ تصویر: شٹر اسٹاک

ترکی اور شام میں 6 فروری کو آنے والے تباہ کن زلزلے نے دنیا کے صحافیوں کو یاد دلایا ہے کہ، زیادہ تر، "قدرتی آفات” مکمل طور پر قدرتی نہیں ہیں – اور اکثر انسانی غلطیاں، کوتاہیاں یا بدعنوانی ان کو بدتر بناتی ہیں۔

مثال کے طور پر، ترکی میں منہدم ہونے والی عمارتوں سے منسلک درجنوں عمارتوں کے ٹھیکیداروں کو گرفتار ہر کر لیا گیا ہے لیکن ان میں سے بہت سی عمارتوں کے ڈھانچوں کو کبھی بھی سیاستدانوں اور دیگر عہدیداروں کی طرف سے لاپرواہ معافی کے قوانین کی وجہ سے مضبوط نہیں کیا گیا۔ ان قوانین یا سیاستدانوں کا کوئی احتساب نہیں کیا گیا۔

فروری کے وسط تک، کم از کم 40000 افراد ہلاک ہوچکے تھے – ماہرین کے مطابق، جان بوجھ کر کی جانے والی نظر اندازی کی وجہ اموات کی تعداد میں کافی اضافہ ہوا۔

گزشتہ دہائی میں موسمیاتی تبدیلی، بدعنوانی، اور جمہوری اداروں کے زوال کے اثرات کے پیش نظر، یہ پہلے سے کہیں زیادہ اہم ہے کہ واچ ڈاگ رپورٹرز سیلاب، زلزلوں، سونامیوں، آتش فشاں کے پھٹنے اور ٹائفون کے بعد اہم کھلاڑیوں کے احتساب پر توجہ دیں، چاہے یہ دور سے ہو یا فیلڈ میں رہہ کر۔

نیپال انویسٹی گیٹو ملٹی میڈیا جرنلزم نیٹ ورک کے بانی، صحافی رجنیش بھنڈاری نے نیویارک ٹائمز، نیشنل جیوگرافک، اور دیگر آؤٹ لیٹس کے لیے 2015 کے نیپال کے زلزلے کے بعد کی کوریج کی۔ اس واقعہ میں تقریباً 9000 افراد ہلاک ہوئے۔

"میں ایک ٹریفک پولیس اسٹیشن میں تھا، اپنی پہلی کہانی بھیجنے کے لیے ان کا انٹرنیٹ استعمال کر رہا تھا،” وہ ایک ویڈیو سٹوری کو یاد کرتے ہیں جو انہوں نے ٹائمز کے لیے کی تھی۔

بھنڈاری کا کہنا ہے کہ ڈیزاسٹر تحقیقات میں واچ ڈاگ کے بہت سے کلاسک طریقے شامل ہیں، جیسے ڈیٹا بیس اور ریموٹ سینسنگ ٹولز، سوشل میڈیا کی تلاش، اور پیسے کی پیروی – خاص طور پر، وہ کہتے ہیں، تعمیر نو کے مرحلے میں، جہاں بدعنوانی کے امکانات زیادہ ہیں۔

تاہم، وہ نوٹ کرتے ہیں کہ ان کہانیوں کو تفتیشی صحافیوں کو زیادہ محنت کرنی پڑتی ہے : فیلڈ سے رپورٹ کرنے کے لیے (یا سائٹ پر کسی ساتھی کو تلاش کرنے کے لیے)؛ لواحقین اور غمزدہ خاندانوں کے لیے ہمدردی کا اظہار کرنا؛ اور واقعے کے بعد  کئی ہفتوں اور مہینوں تک نئے اور تخلیقی سوالات پوچھنا جاری رکھنا۔

واچ ڈاگ رپورٹرز کے لیے ایک اچھا نقطہ آغاز اس خیال کو ختم کرنا ہے کہ ترکی میں زلزلے جیسی قدرتی آفت سے ہونے والا نقصان محض "فطرت کے اعمال” کی وجہ سے ہوتا ہے۔ اس کے بجائے، خطرناک واقعات اور انسانی اعمال کے مرکب کے طور پر سوچیں۔ اور پھر فرانزک ٹریلز کی پیروی شروع کریں: پیسہ، لوگ، غیر متوقع ضروریات، جوابدہ اہلکار۔ ہو سکتا ہے کہ آپ کی تفتیش سب سے پہلے اس بات کی نشاندہی کرے کہ واقعی کیا ہوا، اور ممکنہ طور پر مستقبل میں جانیں بچ سکیں۔

اس بات کو ذہن میں رکھتے ہوئے یہاں 10 ایسے سوال ہیں جو تفتیشی ایڈیٹرز اور رپورٹرزکو خود سے اور اپنے ذرائع سے پوچھنے چاہیے

1۔ امدادی رقم کہاں گئی — اور اس کا بہاؤ کن مرحلوں پر روکا جاتا ہے؟ آفات سے لاکھوں ڈالر کی

investigate natural disaster earthquake Nepal

تصویر: اسکرین شاٹ، سینٹر فار انویسٹی گیٹو جرنلزم، نیپال

امداد، تعمیر نو کے گرانٹس اور امدادی وسائل کے اجراء متحرک ہوتے ہیں۔ بدعنوانی کے معاملات کے علاوہ، صحافیوں نے اکثر تقسیم کی خطرناک غلطیوں اور نظامی ترسیل کی ناکامیوں کا انکشاف کیا ہے جس سے رقم لوگوں تک نہیں پحنچتی یا روک دی جاتی ہے۔ سنٹر فار انویسٹی گیٹو جرنلزم، نیپال نے 2015 میں نیپال کے تباہ کن زلزلے کے بعد تعمیر نو کی فنڈنگ ​​میں چوک پوائنٹس پر ایک شاندار واچ ڈاگ کہانی تیار کی، جس نے ظاہر کیا کہ صرف 3% رقم سے 21 ماہ کے بعد بے گھر ہونے والے متاثرین کی مدد کی گئی۔ منی ٹریل یا پیسے کا پیچھا کرنے جے لہے کچھ اہم وسالات: "ڈسٹری بیوشن چین میں اہم شخصیات کون ہیں — اورنگران کون ہے؟”، "کیا ہنگامی چیزیں یا خوراک چرائی گئی ہے یا بلیک مارکیٹ کی معیشتوں کی طرف موڑ دی گئی ہے؟،” اور "نجی خدمات فراہم کرنے والے کیسے منتخب کئے گئے تھے اور کیا انہوں نے ان معاہدوں کو پورا کیا؟”

2۔ کیا انسانوں کی وجہ سے اس واقعے کے اثرات زیادہ ہوئے؟ یہ واحد سوال متعدد تحقیقاتی زاویوں کو متحرک کر سکتا ہے – منصوبہ بندی کی ناکامیوں اور مواصلاتی خرابیوں پر فوری کہانیوں سے لے کر موسمیاتی تبدیلی کے طویل مدتی اثرات تک۔ چند مستثنیات کے علاوہ، قدرتی آفات عام طور پر قابل قیاس ہوتی ہیں اور ان کو منصوبہ بندی، وسائل کی تقسیم، اور — سمندری طوفان میں اضافے، آتش فشاں پھٹنے اور سونامی جیسی آفات کے اثر کو بروقت عوامی انتباہات سے بھی کم کیا جا سکتا ہے۔ اور نقصان اور جانی نقصان کو مؤثر اور مربوط حکومتی متحرک ہونے سے محدود کیا جا سکتا ہے، جیسا کہ 2010 میں نیوزی لینڈ میں ۱۔۷ شدت کے کینٹربری زلزلے کے کامیاب ردعمل میں دیکھا گیا تھا – جس میں صرف ایک شخص ہلاک ہوا تھا۔

3-کیا آفت آنے سے قریبی سائٹس سے رساوٴ یا زہریلی آلودگی کا سبب بن سکتی ہے؟ فوکوشیما جوہری تباہی – اور اس میں شامل تکنیکی اور مواصلاتی خرابیاں – جاپان میں 2011 کے سونامی کے بعد سب سے مشہور مثال ہے۔ لیکن زلزلے، سیلاب، اور سونامی تباہ شدہ آئل ریفائنریوں، فوجی اڈوں، اور کیمیائی پلانٹس سے آلودگی کے اثرات کو متحرک کر سکتے ہیں، جو اکثر صحافتی تحقیقات کے بغیر ظاہر نہیں ہوتے ہیں۔

4۔ کیا ہلاکتوں کی تعداد کرپشن یا بدعنوانی کی وجہ سے بڑھی؟ نیچر نامی جریدے میں ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق حالیہ دہائیوں میں زلزلوں کی وجہ سے منہدم ہونے والی عمارتوں سے ہونے والی تمام اموات میں سے 83 فیصد ایسے ممالک میں ہوئیں جہاں نظامی بدعنوانی کی خصوصیت ہے۔ مصنفین نے نوٹ کیا کہ ناقص تعمیراتی طریقہ کار "اعتدال پسند زلزلوں کو بڑی آفات میں تبدیل کرنے کے لیے زیادہ تر ذمہ دار ہیں۔” دیگر معاملات میں، غیر ذمہ دار رہنماؤں نے ہنگامی ردعمل کے اہم خطوط پر نااہل قریبی ساتھی لگائے ہیں، جب کہ بدعنوانی اور امدادی رقوم کی غیر قانونی منتقلی مزید جانوں کے ضیاع کا باعث بنی ہے، جیسا کہ مبینہ طور پر 2022 میں پاکستان کے بڑے سیلاب کے بعد ہوا تھا۔

5۔ ہنگامی انتظامی ایجنسیوں میں مسائل، یا آفات سے متعلق امداد میں تفاوت کے بارے میں ڈیٹا کیا کہتا ہے؟ 2021 میں، واشنگٹن پوسٹ کے ڈیٹا جرنلسٹ اینڈریو با ٹران نے حکومتی ڈیٹا بیس میں گہرائی سے تحقیق کر کے یہ ظاہر کیا کہ امریکی فیڈرل ایمرجنسی مینجمنٹ ایجنسی (ایف ای ایم اے) سے امداد کی منظوری کی شرح 2010 میں 43 فیصد سے کم ہو کر 2021 میں صرف 13 فیصد رہ گئی۔ انہوں نے مردم شماری کے اعداد و شمار میں نسل کے زمرے کے ساتھ  امدادی ڈیٹا ملایا اور یہ ظاہرکیا کہ "ڈیپ ساؤتھ” میں تباہی سے بچ جانے والے سیاہ فاموں کو منظم طریقے سے امداد دینے سے انکار کیا گیا تھا۔

6۔ اخلاقی طریقے سے زندہ بچ جانے والوں میں ظاہری لوٹ مار اور لاقانونیت کی اطلاع کیسے دے سکتے ہیں؟ یہ تفتیشی زاویہ نہیں، لیکن اس کے باوجود قابل توجہ نقطہ ہے: دقیانوسی تصورات اور تعصب سے محتاط رہیں۔ جیسا کہ محقق نادیہ داویشہ نے امریکہ میں 2005 کے سمندری طوفان کترینہ کی تباہی کی خبروں کی کوریج کے تجزیے میں پایا، سیاہ فام زندہ بچ جانے والوں کو اکثر لاقانونیت کے حوالے سے بیان کیا گیا، جب کہ سفید فام زندہ بچ جانے والوں کو مدد کے متلاشی کے طور پر پیش کیا گیا۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ کس طرح ایک افریقی نژاد امریکی شخص کو سٹور سے کھانا لے کر جاتے ہوئے دیکھا گیا تھا اسے "لوٹر” کے طور پر بیان کیا گیا تھا، جبکہ ایسا کرنے والا ایک سفید فام شخص صرف "کھانا ڈھونڈ رہا تھا۔” ماہرین اس بات پر زور دیتے ہیں کہ صحافیوں کو دقیانوسی تصورات سے بچنے اور ہر متاثرہ کمیونٹی کو درپیش حالات کے تناظر میں لوٹ مار کے واقعات کی رپورٹنگ کرنے کا خیال رکھنا چاہیے۔

7۔ ہنگامی ردعمل کے نئے کھلاڑیوں سے کیا سیکھ سکتے ہیں؟ جیسا کہ دا نیو یومینیٹیریئن کی ایگزیکٹو ایڈیٹر، جوزفین سمڈتھ  نے جی آئی جے این کو بتایا، ڈیزاسٹر رسپانس – اور "30 بلین ڈالر کی انسانی امداد کی صنعت” – اب حکومتوں، اقوام متحدہ، اور "بڑی امداد” کا خصوصی کاروبار نہیں ہیں۔ اب ان میں نجی افراد، آن لائن کمیونٹیز، اور یہاں تک کہ رضاکار فائر فائٹرز بھی شامل ہیں جو اپنے خرچ پر آفات کا سفر کرتے ہیں۔ یہ کھلاڑی اہم اور قابل بھروسہ آزاد حقائق، قیمتی رسائی فراہم کر سکتے ہیں، اور یہاں تک کہ وِسل بلورز کے طور پر کام کر سکتے ہیں۔

8۔ ابتدائی آفات سے صحت عامہ کو کیا خطرات لاحق ہوسکتے ہیں؟ آفات سے پیدا ہونے والے نئے حالات – خاص طور پر آلودہ پینے کے پانی اور صفائی ستھرائی کی ناکامی نے اکثر قدرتی آفات کے بعد بیماریوں سے اموات کی نئی لہریں پیدا کی ہیں۔ اس کے علاوہ، روزمرہ کی اہم صحت کی خدمات میں رکاوٹیں – تپ دق کی گولیوں سے لے کر قبل از پیدائش کی دیکھ بھال اور وینٹی لیٹرز تک – کو قریب سے جانچنے کی ضرورت ہے۔

9۔ تباہی کا فائدہ کون اٹھا رہا ہے؟ ماضی میں آفات میں موقع پرستوں کی ایک خطرناک قسم ابھرتی ہوئی دیکھی گئی ہے – نظریاتی ڈس انفارمرز سے لے کر بدعنوان اہلکاروں تک اور آن لائن عطیات کو ہائی جیک کرنے کے لئے متاثرہ بننے والے سکیمرز تک۔ 2010 میں ہیٹی کے زلزلے کے ہفتوں بعد، پورٹ-او-پرنس کے تباہ شدہ بین الاقوامی ہوائی اڈے پر ایک آف ڈیوٹی اہلکار نے رپورٹر اور ایک نجی پائلٹ کو وہاں سے جانے کی اجازت کے بدلے میں بھتہ لینے کی کوشش کی، جس کی وجہ سے پائلٹ کو، ایک پرتشدد گروہ جسے اہلکار نے طلب کیا تھا، سے بچنے کے لئے جہاز کو ٹیکسی کرنا پڑا۔

10۔ ہم یہاں کیا نہیں کر رہے ہیں؟ تعمیر نو کے منصوبوں کے لیے درکار ہنر مند کاریگروں کی کمی سے لے کر ممکنہ آفات کی راہ میں دھنسی ہوئی غریب برادریوں تک، آفات کے بعد آنے والے مسائل اتنے زیادہ ہیں کہ ان کے لیے باقاعدہ ادارتی ذہن سازی کی ضرورت ہے۔ ہمیں بتائیں کہ کیا آپ کے پاس شامل کرنے کے لیے آئیڈیاز ہیں، اور ہم انہیں تباہی کی ایک بڑی تحقیقاتی گائیڈ میں شامل کریں گے جس پر ہم کام کر رہے ہیں۔

___________________________________________________________

Rowan Philp, senior reporter GIJNروون فلپ جی آئی جے این کے سینئر رپورٹر ہیں۔ وہ پہلے جنوبی افریقہ کے سنڈے ٹائمز کے چیف رپورٹر تھے۔ ایک غیر ملکی نامہ نگار کے طور پر، انہوں نے قدرتی آفات کا احاطہ کیا ہے جن میں موزمبیق میں 2000 کا سیلاب، سری لنکا میں 2006 کا سونامی اور 2010 کا ہیٹی کا زلزلہ شامل ہیں۔

ہمارے مضامین کو تخلیقی العام لائسنس کے تحت مفت، آن لائن یا پرنٹ میں دوبارہ شائع کریں۔

اس آرٹیکل کو دوبارہ شائع کریں


Material from GIJN’s website is generally available for republication under a Creative Commons Attribution-NonCommercial 4.0 International license. Images usually are published under a different license, so we advise you to use alternatives or contact us regarding permission. Here are our full terms for republication. You must credit the author, link to the original story, and name GIJN as the first publisher. For any queries or to send us a courtesy republication note, write to hello@gijn.org.

اگلی کہانی پڑھیں

Rijksmuseum archive comparison Freibrug cathedral

رپورٹنگ تجاویز اور ٹولز طریقہ کار

پرانی تصاویر کی تحقیق کرنے کے لیے نئی ٹیکنالوجی اور آن لائن وسائل

پرانی تصویروں کی تحقیق کے لیے نئی ٹیکنالوجی اور آن لائن وسائل استعمال کرنے کے لیے تجاویز اور ٹولز۔ یہ جانیں کے یہ تصاویر کہاں کی ہیں، کب لی گئیں اور کس نی لیں؟

Facebook privacy settings, online security jouranlists

جی آئی جے این ٹول باکس: جدید ترین — اور مفت — آن لائن تحقیقاتی ٹولز جو آپ ابھی آزما سکتے ہیں۔

امریکہ میں ہونے والے نائکار کانفرنس میں کچھ ایسے نئے ٹولز پیش کیے گئے جو صحافیوں کو حقائق کی جانچ پڑتال، موضوع کی بریفنگ، اور آن لائین رازداری برکرار رکھنے میں مدد کرتے ہیں۔ اس تحریر میں جی آئی جے این نے ان ٹولز کی فہرست بنا کر ان کے بارے میں مختصر معلومات فراہم کی ہے۔