رسائی

ٹیکسٹ سائیز

رنگوں کے اختایارات

مونوکروم مدھم رنگ گہرا

پڑھنے کے ٹولز

علیحدگی پیمائش

رپورٹنگ

موضوعات

تحقیقات کو بڑھانے کے لیے جغرافیائی محل وقوع اور اوپن سورس ڈیٹا کے استعمال کے لیے 10 نکات

یہ مضمون ان زبانوں میں بھی دستیاب ہے

ایک ایسے شخص کے فیس بک پیج کا تجزیہ کرتے ہوئے جس پر شق تھا کہ وہ کسی برے کام میں ملوث ہے، ایک ڈیجیٹل تفتیش کار نے کچھ غیر معمولی دیکھا۔ وہ جس شخص پر تحقیق کر رہا تھا اسے سیلفی لینے کا بہت شوق تھا، لیکن یہ شاٹ مختلف تھا۔

یہ شخص لیبیا کے ساحل سے دور ایک کشتی کے عرشے پر کیمرے میں گھور رہا تھا، لیکن پس منظر میں زوم کرکے، وہ متعدد فوجی گاڑیوں اور تفصیلات کو دیکھ سکتا تھا جس سے یہ معلوم ہوتا تھا کہ وہ کہاں سے آرہی ہیں۔

یہ جیگسا پزل کا وہ ٹکڑا تھا جس نے سنٹر فار انفارمیشن ریزیلینس (Centre for Information Resilience) میں تحقیقات کے ڈائریکٹر بینجمن سٹرِک اور ان کی ٹیم کو لیبیا کے ہتھیاروں کی پابندی کی خلاف ورزیوں کے بارے میں ایک کہانی کی رپورٹ کرنے میں مدد کی۔ دو سال قبل قائم کیا گیا، سینٹر برطانیہ میں مقیم ایک آزاد غیر منفعتی ادارہ ہے، جس کا مشن "غلط معلومات کا مقابلہ کرنا، انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو بے نقاب کرنا، اور خواتین اور اقلیتوں کے لیے نقصان دہ آن لائن رویے کا مقابلہ کرنا ہے۔” اب اس کا عملہ تقریباً 60 افراد کا ہے اور اس کے مشیروں میں ایسٹونیا کے سابق صدر ٹوماس ہینڈرک ایلویس اور تجربہ کار صحافی اور دستاویزی فلم ساز سائمن اوسٹرووسکی شامل ہیں۔ اس کے اہم منصوبوں میں میانمار وٹنس، 2021 میں جنتا کے قبضے کے بعد سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی ایک کھلی تحقیقات، اور آئیز آن روس، یوکرین میں جاری جنگ کا ایک تفصیلی، روزانہ اپ ڈیٹ ہونے والا نقشہ ہے۔

ان منصوبوں اور لیبیا کے واقعے سے اہم سبق بہت دور رس ہے: ڈیجیٹل دنیا غلط کاموں کی تحقیقات کرنے کی کوشش کرنے والوں کے لیے بہت سارے مواقع فراہم کرتی ہے۔ اور ڈیجیٹل دور میں، تحقیقاتی صحافیوں کو خود کو مجرمانہ سیلفی کی طاقت کو ہمیشہ یاد رکھنا چاہیے۔

بین سٹرِک ڈیٹا، نقشے، اور جغرافیائی محل وقوع یا جغرافیائی پوزیشن کے دوسرے ٹولز کا استعمال کرتے ہوئے ڈیجیٹل تحقیقات میں مہارت رکھتے ہیں — کسی چیز کی جغرافیائی پوزیشن کا تعین کرنے کا عمل۔ سٹرِک غلط کاموں، خاص طور پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو بے نقاب کرنے کے لیے ان تکنیکوں کا استعمال کرتے ہیں۔ انہوں نے بی بی سی افریقہ آئی اور بیلنگ کیٹ کے ساتھ تحقیقات پر کام کیا ہے، اور کیمرون میں غیر قانونی پھانسیوں کی جانچ پڑتال، میانمار میں تباہ شدہ دیہاتوں کی تحقیقاتی دستاویز اور سوڈان میں قتل عام کی کہانیوں پر کام کیا ہے۔ 

پیروگیا، اٹلی میں 2022 کے بین الاقوامی صحافتی میلے میں اور تقریب کے بعد جی آئی جے این سے بات کرتے ہوئے، سٹرِک نے صحافیوں کے لیے اپنے کام میں جغرافیائی محل وقوع اور اوپن سورس تکنیک استعمال کرنے کے لیے درج ذیل تجاویز پیش کیں۔

1 جغرافیے کی شناخت کے لیے منظر کو چیک کریں

انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے متعلق تحقیقات پر کام کرنے کا مطلب ہے کہ سٹرِک جس مواد پر کام کرتے ہیں وہ اکثر پیچیدہ اور چیلنجنگ ہوتا ہے۔ لیکن ایک خاص طور پر خوفناک کہانی کیمرون میں خواتین اور بچوں کو دھول بھرے ٹریک سے نیچے مارچ کرنے کی ویڈیو سے شروع ہوئی۔ ایک عورت نے ایک بچہ اپنی پیٹھ سے باندھا ہوا تھا، دوسری اپنے بچوں کو لے کراس کے ساتھ چل رہی تھی جب اسے کچھ سپاہیوں نے تھپڑ مارا اور طعنہ دیا۔ ویڈیو خوفناک اور گرافک تھی اور اس میں دکھایا گیا تھا کہ متاثرین کی آنکھوں پر پٹی باندھی گئی اور پھر گولی مار دی گئی – یہ سب فلم پر کیپچر کیا گیا۔

"اس طرح کے دلخراش واقعات رونما ہوتے ہیں۔ خوش قسمتی سے یہ کیمرے پر پکڑا گیا،” سٹرِک نے کہا۔ "جب یہ ویڈیو سامنے آئی تو کیمرون کی حکومت نے کہا کہ یہ جعلی خبریں، جعلی فوٹیج تھیں، اور اسے کیمرون میں فلمایا نہیں گیا تھا۔ ہم نے سوچا… ہم آپ کو غلط ثابت کرنے جا رہے ہیں۔‘‘

بی بی سی افریقہ آئی کے لیے ایک ٹیم کے حصے کے طور پر کام کرتے ہوئے، سٹرِک اور ان کے ساتھی تفتیش کاروں نے ویڈیو کو ڈی کنسٹرکٹ کیا تاکہ یہ معلوم کیا جا سکے کہ یہ کہاں ہوا اور کون ذمہ دار تھا۔ سب سے پہلے، انہوں نے پہاڑی سلسلے کا تجزیہ کیا جسے ویڈیو کے پس منظر میں دیکھا جا سکتا تھا، اور رج لائن سے ملنے کے لیے گوگل ارتھ کا استعمال کیا۔ پھر وہ دھول سے بھرے راستے اور ان کے ساتھ والی عمارتوں کو سیٹلائٹ کی تصویروں سے ملانے میں کامیاب ہو گئے۔ نتیجے میں ویڈیو تحقیقات، اناٹومی آف اے کلنگ نے پیبوڈی اور ڈی آئی جی ایوارڈز جیتے۔

ہمیشہ، ہم ہر چھوٹی سے چھوٹی تفصیل دیکھت تھے،” سٹرِک نے وضاحت کی۔ "ہم ہر ایک درخت کو ملانا چاہتے تھے جو ہمیں سیٹلائٹ امیج میں یہ کہنے کے لیے مل سکتا تھا: ‘اس کو آزمائیں اور اسے غلط ثابت کریں’۔”

ایک اور موقع پر، یوکرین پر روسی حملے کی ایک ویڈیو کی چھان بین کرتے ہوئے، وہ ٹرین کی پٹریوں اور عمارت کے نمونوں کی نشاندہی کرنے میں کامیاب ہوئے جس سے صحافیوں کو یہ شناخت کرنے میں مدد ملی کہ گولہ باری کہاں ہوئی۔

اس طرح کی تحقیقات کے لیے، سٹرِک گوگل ارتھ استعمال کرنے کی تجویز کرتے ہیں۔ مفت سیٹلائٹ امیجری سینٹینیل ہب (Sentinel Hub) سے، سیٹلائٹ امیجری پر مبنی جو ہر پانچ دن بعد اپ ڈیٹ ہوتی ہے۔ اور ہائی ریزولیوشن امیجز جو کبھی کبھار میکسار(Maxar) کے ذریعے فراہم کی جاتی ہیں۔ اگرچہ مؤخر الذکر کو عام طور پر ادا شدہ فیس کی ضرورت ہوتی ہے، لیکن وہ کہتے ہیں کہ پریس آفس بعض اوقات مدد کر سکتا ہے۔ وہ بتاتے ہیں کہ ماریوپول میں بم زدہ تھیٹر کی میکسار کی ہائی ریزولوشن والی تصویر "بہت اچھی” تھی، آپ عمارت کے باہر زمین پر لکھا ہوا سائریلک لفظ "بچوں” کو اس پر حملے سے پہلے پڑھ سکتے تھے۔ "یہ اس کی طاقت ہے، اس قسم کی سیٹلائٹ امیجری کی طاقت،” انہوں نے کہا۔

2 تاریخوں کا تعیین کرنے کے لیے سیٹلائٹ امیجز کا استعمال کریں

ایک بار جب صحافی کسی خاص واقعہ کے مقام کی نشاندہی کر لیتے ہیں، تو انہیں یہ معلوم کرنے کی ضرورت ہوتی ہے کہ یہ واقعہ کب ہوا تھا۔

سٹرک کا کہنا ہے کہ "یہ ایسا ہی ہے جیسے بچوں کا کھیل ‘سپاٹ دی ڈفرنس’، لیکن صحافیوں کے لیے صرف ایک بڑا ورژن۔ کیمرون کے معاملے میں، وہ نئی عمارتوں کی نشاندہی کر سکتے ہیں جو حملے کے وقت ویڈیو میں نہیں تھیں جس نے انہیں کچھ ہونے کے وقت کی نشاندہی کرنے میں مدد کی۔ "یہ عمارت 2014 میں نہیں تھی، لیکن یہ 2016 میں تھی… جو ہمیں وقت کی ایک کھڑکی فراہم کرتی ہے جو کافی مفید ہے۔”

3 سورج کی روشنی اور سائے کے ذریعے سال کے وقت کی شناخت کریں۔

"سُن ڈائیل عام طور پر پارک میں سمنٹ کی بنی چیزیں ہیں جن کہ سائے سے وقت کا اندازہ لاگایا جاتا ہے۔ تھوڑا سا اس آدمی کی طرح،” سٹرک نے آئی جے کی ایک تقریب میں کہا، کیمرون ویڈیو میں فوجیوں میں سے ایک کی طرف اشارہ کرتے ہوئے، جو ریت پر سایہ ڈال رہا تھا۔ شمسی پوزیشن سے تاریخ اور وقت کا اندازہ لگانے کے لیے مشہور ٹولز میں سن کالک (Sun Calc) اور این او اے اے سولر پوزیشن(NOAA Solar Position) کیلکولیٹر شامل ہیں۔

سٹرک نے کہا کہ سورج کی روشنی کی سمت کی نشاندہی کرنا ممکن ہے، اور اس مثال میں، سورج کی روشنی کا وہ خاص زاویہ صرف مخصوص اوقات میں، اور مخصوص وقت میں مخصوص سالوں میں ہوتا ہے۔ اس معلومات کے ساتھ، ٹیم  یہ تعین کرنے میں کامیاب ہوئی کہ ویڈیو کو 20 مارچ سے 5 اپریل 2015 کے درمیان فلمایا گیا تھا – حملے کی ویڈیو اپ لوڈ ہونے سے تین سال پہلے۔

4 چھوٹی لیکن ممکنہ طور پر اہم  تفصیلات کی چھان بین کریں

سوشل میڈیا پوسٹس یا آن لائن شیئر کی گئی ویڈیوز کی تفتیش سے مزید مجرمانہ ثبوت، یا معلومات کے ٹکڑے مل سکتے ہیں جو تفتیش کاروں کو ایک پهیلی کو حل کرنے میں مدد کر سکتے ہیں۔ کیمرون کی ویڈیو میں، فوجیوں کی طرف سے نشان زد بندوقوں میں سے ایک پر ہتھیاروں کی شناخت دکھائی دے رہی تھی۔ جب کیمرون کی حکومت نے کہا کہ یہ یونیفارم ان کے فوجیوں کے نہیں ہیں، تفتیش کاروں کو وہ تصاویر ملیں جو فوجیوں نے خود فیس بک پر اپ لوڈ کی تھیں۔ وہ کیا پہنے ہوئے تھے؟ اس ویڈیو میں انہی مردوں کی طرح کے یونیفارم۔

"ایک بار پھر، فیس بک اور سنیپ چیٹ کا شکریہ، فوجی جہاں یہ ہوا وہاں سے پانچ کلومیٹر  کے دائرے میں اپنی تصاویر اپ لوڈ کر رہے تھے،” سٹرک نے کہا۔ ایک بار جب ٹیم نے فوج کی ایک جنگی چوکی کی نشاندہی کی، اس کے بعد انہوں نے یہ شناخت کرنے کی کوشش شروع کی کہ حملے کے وقت بیس پر کون تھا۔

5 باطل کی خود ساختہ طاقت کو نظر انداز نہ کریں

کیمرون میں، سٹرک اور ان کے ساتھی تفتیش کار تین مخصوص مردوں کی شناخت کرنے میں کامیاب رہے، بڑی حد تک ان تینوں کے سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی ویڈیوز اور تصاویر کے ذریعے۔ "آزادانہ طور پر اس کی دستاویز کرنا کافی آسان تھا۔”

لیبیا سیلفی کے معاملے میں، اس شخص کی آن لائن "لڑکیوں سے چیٹ کرنے” کی کوشش کرنے کی وجہ سے اس نے ہتھیاروں کی پابندی کی خلاف ورزی کے بارے میں ایک مجرمانہ کہانی سنائی۔

6 لمبی گیم کھیلیں

ٹیم کی کیمرون حملے کے بارے میں کہانی شائع ہونے کے بعد، ویڈیو میں دکھائے گئے فوجیوں کے خلاف مقدمہ چلانے کی متعدد کوششیں کی گئیں۔ "بالآخر 2020 میں، ان میں سے چار افراد کو 10 سال کی سزا سنائی گئی،” سٹرک نے وضاحت کی۔ "یہ کچھ حد تک انصاف اور احتساب ہے۔ تفتیشی صحافی کے طور پر ہمارے پاس جو طاقت ہے وہ متاثرین کو نمائندگی دے رہی ہے۔ دن کے اختتام پر، وہ خواتین اور بچے ہیں جن کے لیے ہمیں یہ کام کرنا ہے۔”

اس میں کافی وقت لگ سکتا ہے، لیکن بہت سے معاملات میں تفتیشی صحافی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو ریکارڈ کر رہے ہیں جو ایک دن ان جرائم کا ارتکاب کرنے والوں کے احتساب کے لیے استعمال کیے جا سکتے ہیں۔

7 تحقیقات کے لیے سوشل میڈیا کا استعمال کریں — اور کراس ریفرنس کریں — اپنے نتائج

کراؤڈ سورس فوٹیج بے مثال بصیرت پیش کر سکتی ہے، جس سے رپورٹرز کو جائے وقوعہ کا لائیو اکاؤنٹ مل سکتا ہے۔ جب سوڈان میں ایک احتجاجی مظاہرے پر گولیاں چلائی گئیں جو ایک قتل عام میں بدل گیا، سٹرک نے فیس بک لائیو فوٹیج کا استعمال کیا تاکہ یہ معلوم کیا جا سکے کہ کیا ہو رہا ہے اور ہر ویڈیو پر ٹائم سٹیمپ کا استعمال کیا "یہ شناخت کرنے کے لیے کہ گولیاں چلنا کس وقت شروع ہوئیں، بالکل کس وقت حملے شروع ہوئے۔”

لیکن یہ آن دی گراؤنڈ ویڈیوز بعض اوقات مبہم، متزلزل اور اکثر صرف کہانی کا ایک حصہ دکھاتی ہیں۔ اس معاملے میں، سٹرک نے ایونٹ سے تین لائیو سٹریمز نکالے اور انہیں کراس ریفرنس کیا تاکہ وہ درست مقامات کا نقشہ بنا سکیں جہاں حملے ہوئے تھے۔

"افراتفری کی فوٹیج کی سمجھ بنانے کا یہ واقعی ایک اچھا طریقہ ہے- سیٹلائٹ کی تصویروں کا استعمال کرتے ہوئے، نقشے پر لوکیشن پنز کا استعمال کرتے ہوئے، ان کہانیوں کو مقام کے لحاظ سے بتانے کی اجازت دیتا ہے تاکہ ہم سامعین کے لیے اس کی واضح تصویر بنا سکیں،” سٹرک نے کہا۔ 

ان کا کہنا ہے کہ دسمبر کے بعد سے جب تفتیش کاروں نے روس میں ٹرینوں کے پیچھے ٹینکوں کی حرکت کو دیکھنا شروع کیا تو آئیز آن روس پروجیکٹ کے ذریعے فوٹیج کی چھان بین کے لیے ایک بڑی مشترکہ کوشش کی گئی۔ حملے کے بعد سے، مرکز کے تفتیش کار اور ان کے شراکت دار، تصادم کی بڑے پیمانے پر نقشہ سازی کی کوشش کے طور پر، سوشل میڈیا پر ظاہر ہونے والی تصاویر اور ویڈیو فوٹیج کی توثیق کرتے ہیں، جیولوکیٹ کرتے ہیں، اور جہاں تک ممکن ہو، تصدیق کرتے ہیں۔

ایک مثال میں، ٹیم نے ٹک ٹاک پر دکھائی گئی فوٹیج کی تصدیق کے لیے سیٹلائٹ امیجری کا استعمال کیا جس میں خارکیف کے قریب گولہ باری دکھائی دیتی ہے، "ایک ایسی جگہ جس پر فروری کے آخر میں گولہ باری کی گئی تھی۔” مل کر کام کرتے ہوئے، انہوں نے شناخت کیا کہ شاٹس کہاں سے فائر کیے گئے ہیں جبکہ یہ ابھی تک واضح نہیں تھا کہ موقع پر کیا ہو رہا ہے۔

پوری کمیونٹی کے ساتھ مل کر سوشل میڈیا پر فوٹیج کی تصدیق کرنے کے قابل ہونا "تنظیموں کی طاقت کو ظاہر کرتا ہے کہ وہ اس معلومات کو نیوز رومز تک پہنچانے اور اسے انصاف اور احتساب کے مقاصد کے لیے محفوظ کرنے کے لیے اکٹھے ہو رہی ہیں،” انہوں نے کہا۔

ان کے آئیز آن روس پروجیکٹ کے ایک حصے کے طور پر، سنٹر فار انفارمیشن ریزیلیئنس اور دیگر اوپن سورس پارٹنرز نے یوکرین پر روس کی جنگ کا ایک مفصل، قریب قریب حقیقی وقت کا نقشہ تیار کیا ہے۔ تصویر: سکرین شاٹ

8 تعاون کی طاقت کو یاد رکھیں

ایک اور تعاون، رشیا یوکرین مانیٹر میپ (Russia Ukraine Monitor Map)، سینٹر فار انفارمیشن ریزیلیئنس اور بیلنگ کیٹ کے تفتیش کاروں، جیو کنفرمڈ (GeoConfirmed)، کانفلیکٹ انٹیلی جنس ٹیم (Conflict Intelligence Team)، اور ایڈوانس ڈیموکریسی (Advance Democracy) جیسے اوپن سورس ٹریکنگ گروپس کے ساتھ ساتھ نقشہ، دستاویز، آرکائیو، اور دیگر کے لیے رضاکاروں کو اکٹھا کرتا ہے تاکہ تحقیق کریں کہ یوکرین میں کیا ہو رہا ہے۔ اور سٹرک کا کہنا ہے کہ جب گہرائی سے اوپن سورس اور جغرافیائی محل وقوع کی تحقیق کی ضرورت ہو تو یہ تعاون اکثر کامیاب تحقیقات کے لیے اہم ثابت ہو سکتا ہے۔  

اسی طرح کی ایک ڈیٹا بیس کی تحقیقات سینٹر فار ایڈوانسڈ اسٹڈیز کا اوسیلی پراجیکٹ (Ocelli Project) تھا، جس کی بنیاد سٹرک نے میانمار کی ریاست رخائن میں روہنگیا گاؤں کی تباہی کے شواہد کو دیکھنے کے لیے رکھی تھی۔

"ہمارے پاس کوئی فنڈنگ ​​نہیں تھی اور ہم نے ایسا کرنے کے لیے یونیورسٹی کے طلباء کے ایک گروپ کے ساتھ کام کیا،” سٹرک نے وضاحت کی۔ "گوگل ارتھ کے ذریعے، ہم نے ہر ایک عمارت کا نقشہ بنایا جو جل گئی تھی، اور کب، ہزاروں عمارتوں کو تلاش کرنے کے لیے اسپریڈ شیٹ بنا رہے تھے۔” بالآخر، ٹیم نے 38,000 تباہ شدہ عمارتوں کی دستاویز کی۔

ان کا کہنا ہے کہ آن لائن تحقیقات کا مطلب ہے کہ مختلف جگہوں پر موجود ٹیمیں مل کر کام کر سکتی ہیں۔ اور یہ صحافیوں کو کسی ملک میں کیا ہو رہا ہے اس کی تحقیقات کرنے کا اختیار دیتا ہے چاہے وہ کہیں بھی مقیم ہوں۔ انہوں نے کہا کہ "کوئی شخص لندن میں ایک صوفے پر بیٹھ کر گوگل ارتھ کو دیکھ رہا ہے جو انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی گواہی دے سکتا ہے۔”

"ان ٹولز نے واقعی جنگ کی رپورٹنگ جیسی چیزوں کو دیکھنے کا انداز بدل دیا ہے،” انہوں نے پینل کے بعد جی آئی جے این کو بتایا۔ "ہمیں فون پر کودنے کی ضرورت نہیں ہے، یا لوگوں کو فون کرنے کی ضرورت نہیں ہے اور یہ کہنا ہے: ‘یہ کہاں فلمایا گیا تھا؟ اسے کب فلمایا گیا؟ یا ہم کیا دیکھ رہے ہیں؟’ ہم سیٹلائٹ امیجری کے ساتھ کراس ریفرنس کر سکتے ہیں اور نئی تفصیلات چن سکتے ہیں اور یہ ہمیں چیزوں کو آزادانہ طور پر ثابت کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

9 ڈیٹا کے ذرائع کا ایک وسیع نیٹ بنائیں

سٹرک نے کہا کہ اب صحافیوں کے لیے آن لائن معلومات کے ذرائع کی ایک بہت بڑی قسم موجود ہے، چاہے وہ فلائٹ ریڈار اور شپنگ اور سمندری ٹریفک کا ڈیٹا ہو، وکی میپیا (Wikimapia) اور ناسا فرمز ہیٹ میپ (NASA FIRMS heat map)، یا یہاں تک کہ سی سی ٹی وی کیمرے کی فوٹیج۔

انہوں نے دیہی یوکرین سے ویڈیو فوٹیج کی ایک مثال دکھائی – ایک بار ایک سی سی ٹی وی نیٹ ورک، غالباً، ایک کسان نے اپنے اسٹاک پر نظر رکھنے کے لیے قائم کیا تھا، لیکن جو پاس ورڈ سے محفوظ نہیں تھا۔ جب اس سال کے شروع میں اوپن سورس کے تفتیش کاروں کی طرف سے جانچ پڑتال کی گئی تو ایسا لگتا تھا کہ ایک روسی بٹالین مواصلاتی آلات کو کھڑا کرنے کی کوشش کر رہی ہے – اور جدوجہد کر رہی ہے۔

اگرچہ فوٹیج نے کچھ ثابت نہیں کیا، "اس سے وہ اضافہ ہوتا ہے جو آپ موقع سے حاصل کر سکتے ہیں،” انہوں نے کہا۔

10 آپ کہانی کیسے بتاتے ہیں اس سے فرق پڑتا ہے — اور رپورٹنگ کے مختلف سامعین پر مختلف اثرات ہوتے ہیں

یہ بتاتے ہوئے کہ آپ کی تحقیقات کیسے ہوئیں، ان طریقوں کی کھوج لگانا جن سے آپ ایک نظریہ کو ثابت کرنے میں کامیاب ہوئے، اور اپنے سامعین کو ان طریقوں کی تفصیل بتانا بھی طاقتور ہیں، سٹرک نے نوٹ کیا۔

"میرے خیال میں جب آپ ان مخصوص تکنیکوں اور آلات کو استعمال کر رہے ہیں، تو یہ کافی مفید ہے کیونکہ آپ لوگوں کو نہ صرف بتا رہے ہیں بلکہ آپ لوگوں کو بھی دکھا رہے ہیں،” انہوں نے کہا۔ "لہذا آپ سامعین کو حقائق دکھانے کے قابل ہیں۔”

"اوپن سورس کا یہ پورا تصور،” انہوں نے جاری رکھا۔ "یہ اس طرح ہے جیسے میں آپ کو کیک دیتا ہوں لیکن آپ کو ترکیب اور اجزاء بھی دیتا ہوں۔ اگر میں آپ کو ایک کہانی سناؤں اور کہوں کہ ‘ہمارے پاس یہ ہے’ لیکن آپ کو وہ ٹولز بھی دینا ہے جو آپ کے لیے عوامی طور پر دستیاب ہیں تاکہ آپ اس کی پیروی کر سکیں اور وہی نتائج حاصل کر سکیں یا مختلف نتائج بھی تلاش کر سکیں؟ یہ واقعی اہم ہے۔”

بصری طور پر قابل تصدیق معلومات پر مبنی کہانیاں سیاسی طور پر چارج شدہ سیاق و سباق میں کہانی سنانے میں بھی مدد کر سکتی ہیں۔ "روسی عوام سب سے اہم سامعین میں سے ایک ہے… ہم سامعین کو حقیقت پہنچا سکتے ہیں جو اہم ہے،” سٹرک نے پیروگیا میں صحافیوں کو بتایا۔ "ان تک یہ معلومات پہنچانا ضروری ہے کیونکہ یہ ان بیانیوں کو چیلنج کرتا ہے جو وہ روزانہ سرکاری حمایت یافتہ ٹی وی پر دیکھ رہے ہیں اور ہمارے لیے یہ یقینی بنانا ضروری ہے کہ سامعین کو کہانی کے دونوں رخ ملیں۔”

_________________________________________________

لورا ڈکسن جی آئی جے این کی ایسوسی ایٹ ایڈیٹر اور برطانیہ سے ایک فری لانس صحافی ہیں۔ انہوں نے کولمبیا، امریکہ اور میکسیکو سے رپورٹ کیا ہے، اور ان کا کام دی ٹائمز، دی واشنگٹن پوسٹ، اور دی اٹلانٹک نے شائع کیا ہے۔ انہوں نے انٹرنیشنل ویمنز میڈیا فاؤنڈیشن اور پولیٹزر سنٹر فار کرائسز رپورٹنگ سے رپورٹنگ فیلوشپس حاصل کی ہیں۔

ہمارے مضامین کو تخلیقی العام لائسنس کے تحت مفت، آن لائن یا پرنٹ میں دوبارہ شائع کریں۔

اس آرٹیکل کو دوبارہ شائع کریں


Material from GIJN’s website is generally available for republication under a Creative Commons Attribution-NonCommercial 4.0 International license. Images usually are published under a different license, so we advise you to use alternatives or contact us regarding permission. Here are our full terms for republication. You must credit the author, link to the original story, and name GIJN as the first publisher. For any queries or to send us a courtesy republication note, write to hello@gijn.org.

اگلی کہانی پڑھیں

Rijksmuseum archive comparison Freibrug cathedral

رپورٹنگ تجاویز اور ٹولز طریقہ کار

پرانی تصاویر کی تحقیق کرنے کے لیے نئی ٹیکنالوجی اور آن لائن وسائل

پرانی تصویروں کی تحقیق کے لیے نئی ٹیکنالوجی اور آن لائن وسائل استعمال کرنے کے لیے تجاویز اور ٹولز۔ یہ جانیں کے یہ تصاویر کہاں کی ہیں، کب لی گئیں اور کس نی لیں؟

Facebook privacy settings, online security jouranlists

جی آئی جے این ٹول باکس: جدید ترین — اور مفت — آن لائن تحقیقاتی ٹولز جو آپ ابھی آزما سکتے ہیں۔

امریکہ میں ہونے والے نائکار کانفرنس میں کچھ ایسے نئے ٹولز پیش کیے گئے جو صحافیوں کو حقائق کی جانچ پڑتال، موضوع کی بریفنگ، اور آن لائین رازداری برکرار رکھنے میں مدد کرتے ہیں۔ اس تحریر میں جی آئی جے این نے ان ٹولز کی فہرست بنا کر ان کے بارے میں مختصر معلومات فراہم کی ہے۔