رسائی

ٹیکسٹ سائیز

رنگوں کے اختایارات

مونوکروم مدھم رنگ گہرا

پڑھنے کے ٹولز

علیحدگی پیمائش

رپورٹنگ

موضوعات

رائٹرز کی ایک ٹیم نے جنوبی امریکہ میں چائلڈ لیبر کے استحصال کی تحقیق کیسے کی

یہ مضمون ان زبانوں میں بھی دستیاب ہے

رائٹرز کی ایک تحقیقات سے پتہ چلا کہ جنوبی امریکہ میں ایسی کمپنیاں تارکین وطن بچوں کو بطور کارکن ملازمت دیتی ہیں، جن میں سے کچھ کی عمریں 12 سال ہیں۔ "وسطی امریکہ سے بڑھتی ہوئی نقل مکانی کے ساتھ، کچھ نابالغ اس پائپ لائن میں داخل ہو رہے ہیں،” رپورٹرز نے خبردار کیا۔ تصویر: شٹر سٹاک

 

ایڈیٹر کا نوٹ: ہر سال ہارورڈ کا شورنسٹین سینٹر ایک ایسے تحقیقاتی منصوبے کے لیے 
25000 امریکی ڈالر کا گولڈ اسمتھ پرائز دیتا ہے جس کا براہ راست اثر امریکہ میں حکومت، سیاست اور پالیسی پر، قومی، ریاستی یا مقامی سطح پر ہو۔اس کہانی میں، کلارک میرِفیلڈ نے رائٹرز کی ٹیم کا انٹرویو کیا جس نے یو ایس ساؤتھ میں کمپنیوں کی طرف سے تارکین وطن بچوں کی مزدوری کے استعمال کو بے نقاب کیا- ایک تحقیق جو انعام کے لیے چھ فائنلسٹوں میں سے ایک تھی۔ یہ کہانی دی جرنلسٹ ریسورس نے شائع کی تھی اور اجازت کے ساتھ دوبارہ شائع کی گئی ہے۔ اس سال کے انعام کی فاتح مسیسیپی ٹوڈے کی اینا وولف تھیں، جنہوں نے ایک 
سابق گورنر اور ایک سپر سٹار ایتھلیٹ پر مشتمل ایک بڑے فلاحی فنڈنگ ​​سکینڈل کا پردہ فاش کیا۔

فروری 2022 میں، رائٹرز نے پہلی کہانی شائع کی جو بعد میں تین حصوں کی سیریز بنی جس میں امریکہ کی جنوبی ریاست الاباما میں چکن اور آٹو پلانٹس میں تارکین وطن کے چائلڈ لیبر کے استعمال کو بے نقاب کیا گیا۔

رپورٹرز جوشوا شنئیر، میکا روزنبرگ اور کرسٹینا کوک نے پایا کہ بچے، جن میں سے کچھ کی عمر 12 سال تھی، اکثر خطرناک مشینری کے ساتھ کام کر رہے تھے جس ان کی زندگیاں خطرے میں تھیں۔ پہلا حصہ، جو کوک کے ایک دیرینہ ذریعہ کے مشورے سے ممکن ہوا، ایک امریکی قصبے میں چائلڈ لیبر کی کہانی بیان کرتا ہے گوائٹے مالا سے تعلق رکھنے والے ایک 16 سالہ تارکین وطن پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے جو انٹرپرائز، الاباما میں ، ایک مرغیوں کے پلانٹ میں کام کرتا ہے۔

"امریکی پولٹری پلانٹس ہمیشہ مزدوری کی تلاش میں ہوتے ہیں اور ملازمتیں بھرنے کے لیے تارکین وطن کارکنوں اور اسٹافنگ ایجنسیوں پر انحصار کرتے ہیں،” رپورٹرز لکھتے ہیں۔ "وسطی امریکہ سے بڑھتی ہوئی نقل مکانی کے ساتھ، کچھ نابالغ اس پائپ لائن میں اپنا راستہ بنا رہے ہیں۔”

اس کہانی کے شائع ہونے کے بعد، رپورٹرز کو مزید ٹپس ملنے لگیں۔ ان ذرائع نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ چائلڈ لیبر کا مسئلہ دیہی الاباما میں چکن پلانٹس سے آگے بڑھ گیا ہے – کہ انہیں آٹو انڈسٹری کو بھی دیکھنا چاہیے۔

سیریز کا دوسرا اور تیسرا حصہ، جو جولائی اور دسمبر میں شائع ہوئے، الاباما میں چار پرزے بنانے والی کمپنیوں میں بچے کارکنوں کے وجود کو بے نقاب کرتے ہیں، جو ہنڈائی موٹر کمپنی اور سسٹر کمپنی کیا کروپ کو سپلائی کرتے ہیں۔ ان حصوں کے سپلائرز میں سے ایک، ایس ایم اے آر ٹی (سمارٹ) الاباما، ہنڈائی کا براہ راست ذیلی ادارہ تھا۔

"کمپنی کے دستاویزات اور دیگر ماخذ مواد کا جائزہ لینے کے بعد جو ہمیں ملا، ہم یہ جاننے میں کامیاب ہو گئے کہ وہ [سپلائر] دراصل ہنڈائی کی  خصوصی مالکیت کی ذیلی کمپنی تھی” شنئیر نے کہا۔ "یہ وہ جگہ ہے جہاں ہمارے لیے خطرے کی گھنٹی بجی۔ ہم نے کہا، اوہ، ٹھیک ہے، ایک منٹ رکو۔ یہ ہنڈائی ہے۔ بچے ہنڈائی کے لیے کام کر رہے ہیں۔ وہ امریکی صارفین کو فروخت کی جانے والی کچھ مقبول ترین کاروں اور ایس یو ویز کے پرزے جمع کر رہے ہیں۔ یہ ملک کا تیسرا سب سے بڑا آٹو مینوفیکچرر ہے۔”

جبکہ دیگر خبر رساں اداروں نے بھی بڑی فرموں میں بچوں کے خطرناک کام کے حالات میں استعمال کرنے کے پریشان کن عمل کے بارے میں رپورٹ کیا، رائٹرز کی تحقیقات نے بے مثال تفصیل اور ذاتی کہانیاں پیش کیں۔

ہنڈائی سپلائرز کے بارے میں رائٹرز کی رپورٹ کے ہفتوں بعد، وفاقی اور ریاستی حکام نے الاباما کے ایک سپلائر کا اچانک دورہ کیا اور سات کم عمر کارکنان کو پایا۔ ایک کلاس ایکشن سوٹ جلد ہی گاہکوں کی طرف سے لایا گیا. امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ نے حال ہی میں اعلان کیا ہے کہ وہ رائٹرز اور دیگر کی رپورٹوں کے بعد، ایک انٹرایجنسی ٹاسک فورس کے ذریعے چائلڈ لیبر کی زیادتیوں کی تحقیق کرے گی۔ حالیہ ہفتوں میں بھی، ہنڈائی نے شیئر ہولڈرز کو بتایا کہ وہ پرزہ جات کی ذیلی کمپنی سے دستبردار ہو جائے گی جس کی شناخت چائلڈ لیبر استعمال کرنے کے طور پر رائٹرز نے کی۔

سیریز کے تمام حصوں کے لیے، رپورٹرز نے مختلف قسم کے ممکنہ ذرائع سے رابطہ کیا، تاکہ مختلف لوگوں کے رائے اور نقطہ نظر مل سکیں۔ ان میں کارکنان اور ان کے اہل خانہ، پلانٹ مینیجرز، سکول، تارکین وطن کی جانب سے کام کرنے والے غیر منافع بخش گروپس، رائٹرز کے ساتھی، اور دیگر ماہرین شامل ہیں جو آٹو انڈسٹری کی سپلائی چین کی پیچیدگیوں کو سمجھتے ہیں۔

امریکہ میں کم عمر کارکنوں کے بارے میں کہانیوں میں سے ایک – اس بار الاباما میں ایک چکن فیکٹری میں کام کرنے والا ایک نوجوان۔ تصویر: اسکرین شاٹ، رائٹرز

مختلف جگہوں پر جا کر کی جانے والی رپورٹنگ بہت زیادہ تھی، جس میں ٹریلر پارکس، اپارٹمنٹس، سکولوں، گرجا گھروں، روزگار کی ایجنسیوں، شیرف کے دفاتر، اور ٹاؤن ہالز کے دروازے کھٹکھٹانا شامل تھا۔ آخر میں، رپورٹنگ ٹیم نے 100 سے زیادہ تارکین وطن کارکنوں کا انٹرویو کیا۔ انہوں نے یہ سیکھا کہ کس طرح علاقائی آٹو سپلائی چینز کارپوریٹ دستاویزات، پولیس ریکارڈ، امیگریشن دستاویزات، صنعتی حادثات کی رپورٹس، اور عدالتی نقلوں کے ہزاروں صفحات سے ڈیٹا بیس بنا کر کام کرتی ہیں۔

رپورٹرز اس حقیقت کے بارے میں خاص طور پر حساس تھے کہ وہ اکثر نابالغوں اور ملک بدری کے خطرے سے دوچار دیگر افراد کا انٹرویو کر رہے تھے جو ریکارڈ پر بات کرنے سے گریزاں تھے۔

کچھ معاملات میں، نابالغ بچے ملازمتوں کے حصول کے مقصد سے امریکہ آئے تھے جو کہ اپنے آبائی ممالک میں جو کچھ وہ کر سکتے تھے اس سے کہیں زیادہ ادا کریں گے، تاکہ اپنے خاندانوں کی مالی مدد کر سکیں۔

"وہ ایک معمے میں ہیں۔” روزنبرگ کا کہنا ہے۔ "وہ زیادہ ترانتہائی مایوس کن حالات میں رہ رہے ہیں۔ گوئٹے مالا میں بہت چھوٹی عمر کے بچے کافی کے کھیتوں میں اور انتہائی خطرناک حالات میں چینی کے پلانٹس میں کام کر رہے ہیں۔ اور بہت سے لوگوں سے جن سے ہم نے یہاں بات کی، ان کا یہ تصور تھا، ‘دیکھو، ہم یہاں پیسہ کمانے کے لیے آئے ہیں اور ہم وہ سب کچھ کر رہے ہیں جو ہم کر سکتے ہیں۔’ میرے خیال میں یہ اس وجہ کا ایک حصہ ہے کہ ہم واقعی اس پر توجہ مرکوز کرنا چاہتے تھے، کمپنیوں اور ان کے طریقوں پر ذمہ داری ڈالتے ہوئے۔”

ہم نے شنئیر، روزنبرگ، اور کوک سے بات کی تاکہ دوسرے صحافیوں کے لیے مخصوص ہدایات اکٹھی کی جائیں جو اپنے کوریج کے علاقوں میں مزدوری کے غیر قانونی طریقوں کو تلاش کرنا چاہتے ہیں۔

1 غیر متوقع ڈیٹا سپائکس تلاش کریں – وہ ایک بنیادی کہانی کی طرف اشارہ کر سکتے ہیں۔

ایک دیرینہ ذریعہ نے 2021 کے وسط میں کوک کو بتایا کہ حکام نے انٹرپرائز، الاباما کے قریب کے علاقے میں چھوڑے جانے والے مہاجر بچوں کی تعداد میں اضافہ دیکھا۔

ذرائع نے کہا کہ ان بچوں کو سمگل کیے جانے یا دوسری صورت میں استحصال کا خطرہ ہو سکتا ہے۔ کوک کا کہنا ہے کہ "اس نے ایک طرح سے ہماری دلچسپی کو بڑھاوا دیا۔”

انہوں نے یو ایس آفس فار ریفیوجی ری سیٹلمنٹ سے ڈیٹا چیک کیا، جو ان اضلاع پر نظر رکھتا ہے جہاں تارکین وطن بچوں کو رہا کیا جاتا ہے، عام طور پر خاندان کے افراد کے حوالے کیا جاتا ہے۔ یہ واضح تھا کہ انٹرپرائز کا علاقہ تیزی سے ساتھ نہ جانے والے مہاجر بچوں کی آبادکاری کے لیے ایک ہاٹ سپاٹ بن گیا تھا۔

اگلا مرحلہ اس دیہی کمیونٹی میں غیر منافعتی گروپوں اور دوسرے لوگوں کا پتہ لگانا تھا جو تارکین وطن کے ساتھ کام کرتے ہیں۔

"لوگوں کی ایک چھوٹی سی کائنات تھی جن تک ہم نے پہنچنے کی کوشش کی، لیکن ہم ایک ہی وقت میں، ایک بہت وسیع جال ڈال رہے ہیں: ایسے گروہ جو تارکین وطن کی مدد کرتے ہیں، بلکہ سکول بھی، ایسے لوگ بھی جو زمینی حقائق کو جانتے تھے، ” روزنبرگ کا کہنا ہے۔ "ہمیں ذرائع کے ذریعے پتہ چلا کہ چکن پروسیسنگ کے بہت سے پلانٹس ہیں، اور یہ تشویش کا ایک مقام تھا۔”

2 پیچیدہ نظام کیسے کام کرتے ہیں اس کا ایک سادہ ڈیٹا بیس بنائیں

آٹو سے متعلق کہانیوں کے لیے، پہلا چیلنج یہ معلوم کرنا تھا کہ پرزوں کے مقامی سپلائی کرنے والے کہاں ہیں اور وہ اس خطے میں بنیادی مینوفیکچرنگ پلانٹس کو کیسے سپلائی کر رہے ہیں۔

انہیں تیسری پارٹی کے مزدور ٹھیکیداروں کی ایک کائنات ملی، کچھ کمپنیوں کی اوورلیپنگ ملکیت کے ساتھ جو تیزی سے تشکیل اور تحلیل ہو جائیں گی۔

روزنبرگ کا کہنا ہے کہ "ہم نے الاباما کے کاروباری ریکارڈز، جارجیا کے کاروباری ریکارڈز کو دیکھتے ہوئے بہت کام کیا۔”

جیسے ہی انہوں نے علاقائی سپلائی چینز کو سمجھنا شروع کیا اور اس میں شامل لوگوں سے انٹرویو کیے، جیسے کہ لیبر کنٹریکٹر، انہوں نے ایک ایکسل سپریڈ شیٹ بنائی جس میں مقامی ایمپلائمنٹ ایجنسیوں سے بڑے مینوفیکچرنگ پلانٹس کے سپلائی کرنے والوں تک کے رابطے دکھائے گئے تھے۔

"یہ بہت ہی نامیاتی طریقے سے ہنڈائی اور اس کی سپلائی چین کی ایک کاروباری تحقیقات میں بدل گیا۔ ” شنئیر کا کہنا ہے۔ "ہم نے ہنڈائی کے بارے میں لکھنے کا ارادہ نہیں کیا۔ یہ ایک معمہ تھا، ‘ارے، ان بچوں کے ساتھ کیا ہو رہا ہے جو الاباما میں جا رہے ہیں؟ کیا ہو رہا ہے؟‘‘ اور چکن کی اس پہلی کہانی کے بعد ہی ہمیں ایک دھماکہ خیز ٹپ ملی کہ بہت سے بچے دیہی آٹو پارٹس پلانٹس میں کام کرتے پائے گئے۔”

Reuters investigation child labor, Hyundai auto plant - Alabama

رائٹرز کی تحقیقات سے پتا چلا ہے کہ آٹو پارٹس کے کئی سپلائرز الاباما میں ہنڈائی کے آٹو پلانٹ کے لیے سامان تیار کرنے کے لیے چائلڈ لیبر کا استعمال کر رہے تھے۔ تصویر: شٹر سٹاک

3 یاد رکھیں کہ اعتماد حاصل کرنے کے لئے عزم چاہئیے اور ذمہ دارانہ رپورٹنگ کے لیے ذرائع کی حفاظت ضروری ہے۔

امریکہ میں کام کرنے والے تارکین وطن اور تارکین وطن کے بچوں کی زندگی میں بہت کچھ ہے۔ جیسا کہ رائٹرز کے نامہ نگار اپنی سیریز میں بیان کرتے ہیں، تارکین وطن اکثر زیادہ سود کی شرح پر سمگلروں کے دسیوں ہزار ڈالر کے مقروض ہوتے ہیں۔ وہ اس اجرت کے لیے امریکہ میں ملازمت برقرار رکھنے کی کوشش کر رہے ہیں جو انہیں اپنے آبائی ممالک میں کمانے میں ہفتوں یا مہینے لگیں گے۔

انٹرپرائز سے دائر کردہ سیریز کے ایک حصے کی لیڈ میں، رپورٹرز لکھتے ہیں:

 "سولہ سال کی عمر میں، جب امریکہ میں زیادہ تر بچے ہائی سکول سے آدھے راستے پر ہیں، امیلیا ڈومنگو نے خود کو اس فارم ٹاؤن میں چکن پروسیسنگ مشینوں پر کام کرتے ہوئے پایا اور اپنے آبائی علاقے گوئٹے مالا میں شارکوں کے قرضے میں ڈوبی ہوئی ہیں۔ میکسیکو کے راستے سمگلروں سے ۱۰ ہزار ڈالر ادھار لینے کے بعد، امیلیا گزشتہ فروری میں ایریزونا میں داخل ہوئی اور خود کو امیگریشن حکام کے حوالے کر دیا۔”

امیلیا کو الاباما میں اس کی بہن کے پاس چھوڑ دیا گیا اور وہ ایک چکن پلانٹ میں کام کرنے لگی۔ رپورٹرز نے ان کا پورا نام استعمال نہ کرنے، گوئٹے مالا میں ان کے آبائی شہر کی شناخت، یا ان کے چہرے یا ان کی بہن کا چہرہ دکھانے والی تصاویر استعمال نہ کرنے پر اتفاق کیا۔ تارکین وطن کے ساتھ کام کرنے والے مقامی گروپوں کے ساتھ اعتماد پیدا کرنے کے لئے پہلے سے کئے گئے کام کے باعث امیلیا اپنی کہانی بتانے کرنے پر راضی ہو گئی۔

"وہ کمیونٹی آؤٹ ریچ بھی مددگار تھی کیونکہ ہم نے کچھ قابل اعتماد ذرائع بنائے تھے جو اس سے جڑے ہوئے تھے جنہوں نے تعارف کرانے میں مدد کی،” روزنبرگ کہتی ہیں۔ "لہذا ہم ان رشتوں کو استوار کرنے میں کامیاب ہو گئے جو اس طرح سے اس کا کچھ اعتماد حاصل کرنے میں مدد کے لیے پہلے ہی بنائے گئے تھے۔”

وہاں ہونا، اس زمین پر جہاں لوگ رہتے ہیں اور کام کرتے ہیں، اعتماد پیدا کرنے کے لیے اہم ہے۔

"آپ کو اپنا چہرہ دکھانا ہوگا،” کوک کہتے ہیں۔ "آپ جانتے ہیں، انہیں دیکھنے دیں کہ آپ کون ہیں، کہ آپ کوئی بے چہرہ سرکاری بیوروکریٹ نہیں ہیں، کہ آپ ایک حقیقی انسان ہیں۔ آپ ایک رپورٹر ہیں، اور آپ نے یہ اضافی سفر ان کو دیکھنے اور ان کی کہانی سننے کے لیے کیا ہے۔”

4 رپورٹنگ کی کوششوں کو مربوط اور ترجیح دینے کے لیے سوشل میڈیا کا استعمال کریں۔

رپورٹرز نے اپنی چائلڈ لیبر کی تحقیقات کے لیے کلیدی ذرائع تلاش کرنے کے لیے سوشل میڈیا کا استعمال کیا۔ انہوں نے نوکری کے لئے بھرتی کرنے والے کارکنوں کو فیس بک پر پوسٹ اور ٹیگ کرتے ہوئے پایا، جس سے رپورٹرز کو یہ احساس حاصل کرنے میں مدد ملی کہ بھرتی کرنے والے کون ہیں، وہ کس قسم کی ملازمتوں کا اشتہار دے رہے ہیں، اور وہ کن کارکنوں تک پہنچنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

ٹیم نے چکن پلانٹ کے سابق اور موجودہ کارکنوں کو تلاش کرنے کے لیے انڈیڈ اور لنکڈان کا بھی استعمال کیا، سینکڑوں ممکنہ ذرائع کو ذاتی پیغامات بھیجے۔

"ایک معاملے میں [جوش] منٹگمری میں تھا اور میں نے اس بھرتی کرنے والے کو انڈیڈ سے تلاش کیا۔” کوک نے کہا۔ "ہمیں اس کا پتہ مل گیا اور جوش اس کی گھر گیا اور اس کا انٹرویو کرنے میں کامیاب رہا۔ اس نے بات کی کیونکہ جوش وہاں تھا، اور وہ فون بالکل نہیں اٹھا رہا تھا۔”

5 ذرائع کو ان کے شیڈول پر ملیں، چاہے اس کا مطلب دیر رات یا صبح سویرے ہو

شفٹ شیڈول پر کام کرنے والے لوگوں کا انٹرویو کرتے وقت، جیسا کہ فوڈ پروسیسنگ اور آٹو پلانٹ کے بہت سے کارکن کرتے ہیں، ویسا ہی کرنے کے لیے تیار رہیں۔

بہت سے معاملات میں، دن یا شام کے اوائل میں کارکنوں سے ملنا رائٹرز کی ٹیم کے لیے ناممکن ثابت ہوا۔

"وہ راتوں رات کام کر رہے ہیں،” شنیئر کہتے ہیں۔ "یہ دن کے 24 گھنٹے کا رپورٹنگ ٹرپ تھا جہاں آپ ان پلانٹس کے باہر فجر کے وقت دکھائی دیتے ہیں، یا آپ سے کہا جاتا ہے کہ رات گئے لوگوں سے ان کے ٹریلرز یا اپارٹمنٹس میں ملیں جو وہ بڑے خاندانوں کے ساتھ بانٹتے ہیں۔”


کلارک میرِفیلڈ نے نیوز ویک اور دی ڈیلی بیسٹ کے رپورٹر کے اور گریٹ ریسیشن سے متعلق تین کتابوں کے محقق اور ایڈیٹر کے طور پر کام کرنے کے بعد 2019 میں دا جرنلسٹس ریسورس میں شمولیت اختیار کی۔ وہ جان جے کالج کے جووینائل جسٹس جرنلزم فیلو تھے اور ان کے کام کو تحقیقاتی رپورٹرز اور ایڈیٹرز نے ایوارڈ دیا ہے۔

ہمارے مضامین کو تخلیقی العام لائسنس کے تحت مفت، آن لائن یا پرنٹ میں دوبارہ شائع کریں۔

اس آرٹیکل کو دوبارہ شائع کریں


Material from GIJN’s website is generally available for republication under a Creative Commons Attribution-NonCommercial 4.0 International license. Images usually are published under a different license, so we advise you to use alternatives or contact us regarding permission. Here are our full terms for republication. You must credit the author, link to the original story, and name GIJN as the first publisher. For any queries or to send us a courtesy republication note, write to hello@gijn.org.

اگلی کہانی پڑھیں

Karachi Sewerage and Water Board corruption investigation, Dawn newspaper

‎کراچی کی واٹر سپلائی چین میں کرپشن اور ’ٹینکر مافیا‘ پر تحقیقات

کراچی کے پانی کی فراہمی کے بحران کی تحقیق کرنت والی ٹیم نے جی آئی جے این کو بتایا کہ انہوں نے یہ کہانی کیسے کی — اور پاکستان کے سب سے بڑے شہر میں تحقیقاتی صحافت کو کس قسم کی مشکلات کا سامنا ہے